پاک سرزمین پارٹی کے سیکریٹری جنرل رضا ہارون نے کراچی سمیت سندھ بھر میں عوامی مسائل کی سنگین صورتحال پر شدید تشویش کا اظہار کرتے ہوئے حکومت سندھ کی نااہلی اور غیرسنجیدہ رویہ کی شدید مذمت کی ہے۔ وہ گزشتہ روز پاکستان ہاؤس میں اندرون سندھ سے آئے ہوئے طلباء کے وفد سے ملاقات کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ پی ایس پی اور اس کی مرکزی قیادت کا فلسفہ عام آدمی کے مسائل کے حل کیلئے آواز بلند کرنا اور حکومت کو مجبور کرنا کہ وہ اپنا آئینی اور قانونی کردار ادا کرے۔ انہوں نے کہا کہ چیئرمین مصطفی کمال اور صدر انیس قائم خانی نے 18 روز دن رات کڑی تپتی دھوپ میں کراچی پریس کلب کے سامنے تاریخی دھرنا دے کر ثابت کر دیا کہ ہم عوامی اشوز کیلئے آواز اٹھانے اور ان کے حل میں سنجیدہ ہیں۔ آج پی ایس پی کے کامیاب دھرنے کی بدولت دیگر جماعتیں بھی کراچی کے اشوز پر آواز بلند کرنے پر مجبورہیں جو کہ خوش آئند بات ہے۔ وفد کے اراکین نے اندرون سندھ ترقیاتی کاموں اور بلدیاتی امور میں شدید عوامی پریشانی کا تذکرہ کیا اور بتایا کہ وہاں بھی عوام موجودہ حکومت کی کارکردگی سے مایوس ہیں اور پی ایس پی کی قیادت کی جانب دیکھ رہے ہیں۔ رضا ہارون نے وفد میں شامل طلبہ کو یقین دلایا کہ پی ایس پی پورے پاکستان کے عوامی مسائل پرحکومت کی توجہ مبذول کروانے کی جدوجہد کر رہی ہے۔
اس موقع پر انہوں نے وفد کے اراکین کو بتایا کہ پرامن احتجاج کا پہلا مرحلہ ختم ہونے کے بعد چئیرمین مصطفی کمال نے دوسرے مرحلے میں ’’ملین مارچ‘‘ کا اعلان کیا ہے جو 14 مئی بروز اتوار شارع فیصل سے شروع ہو گا اور اس سلسلہ میں عوامی رابطہ مہم کا آغاز کر دیا گیا ہے۔ پی ایس پی کا پہلا علاقائی عوامی اجتماع لیاقت آاباد میں کیا گیا جس میں بڑی تعداد میں علاقہ کے لوگوں نے شرکت کر کے پی ایس پی اور چئیرمین کو اپنے بھرپور تعاون کا یقین دلایا۔ آج اسی عوامی مہم کا دوسرا بڑا اجتماع کورنگی نمبر ڈھائی پر رات 8 بجے منعقد کیا جائے گا جس سے چئیرمین مصطفی کمال خطاب کریں گے۔ رضا ہارون نے عوام سے اپیل کی کہ وہ بڑی تعداد میں اس اجتماع میں شرکت کریں اور اپنا احتجاج ریکارڈ کروائیں۔ مسئلہ بنیادی انسانی حقوق کا ہے۔